اے سی کو کس وقت اور کتنی اسپیڈ پر چلانا چاہئیے

کتنی اسپیڈ

پاکستان ٹائمز! گرمیوں میں عموما بجلی کا بل زیادہ آتا ہے کیونکہ فریج، اے سی، اور دیگر بجلی کے سامان ایک ساتھ چل رہے ہوتے ہیں۔ ان گرمیوں میں اے سی ایک ایسی نعمت ہے جس میں سکھ کا سانس لیا جا سکتا ہے مگر وہ سکھ کا سانس بھی اس وقت دکھ میں بدل جاتا ہے جب بجلی کا بل آپ کی امیدوں سے زیادہ آجائے۔اس تپتی گرمی میں اے سی دن رات بھی چلتے ہیں ایسے میں کیوں

نا آپ کچھ ایسا کریں کہ اے سی کی کولنگ بھی بر قرار رہے اور بجلی کا بل بھی کم آئے۔اے سی ٹیمپریچر آپ کے بل کو کم کر سکتا ہے:ویب سائٹ لیو منٹ ( livemint) کے مطابقاگر آپ اپنے اے سی ٹیمپریچر کو کم رکھیں گے یعنی 18 ڈگری پر رکھیں گے تو آپ کا کمپریسر کام بھی رفتہ رفتہ کرے گا جس سے بجلی کا استعمال بھی زیادہ ہوگا۔ بانسبت اس کے کہ آپ اے سی ٹیمپریچر بڑھاتے ہیں یعنی 24 ڈگری پر رکھیں، تو اے سی بجلی کا استعمال کر کم کرے گا جس سے بجلی کی بچت ہو سکتی ہے۔اے سی آن کرتے وقت دیگر آلات بند کردیں:جب آپ اے سی آن کرتے ہیں تو اس بات کو نظر انداز کر دیتے ہیں کہ اے سی اور دیگر برقی آلات آپ کے بجلی کے بل میں حیرت انگیز اضافے کا باعث بن سکتا ہے۔ایسے میں اس بات کا خیال رکھیں کہ جب اے سی آن کریں تو کوئی غیر ضروری برقی آلات کو بند کر دیں تاکہ بجلی کی بچت ہو سکے۔بجلی کے بل بڑھانے والے گھنٹے:چوبیس گھنٹوں میں کچھ گھنٹے ایسے ہوتے ہیں

جن میں بجلی کا بل زیادہ آتا ہے جسے پیک آورز ( peak hours ) کہا جاتا ہے۔ یہ پیک آورز آپ کے بجلی کے بل میں حیرت انگیز اضافہ کر سکتے ہیں۔ اگر آپ چاہتے ہیں کہ اے سی کی ٹھنڈک بر قرار رہے اور پیک آورز میں اے سی بھی نہ چلے، تو پیک آورز سے پہلے ہی اے سی آن کر دیں اور کمرے کو بند کر دیں تاکہ کمرہ ٹھنڈہ ہو جائے۔ اس طرح آپ پیک آورز میں اے سی ٹھنڈک سے بھی لطف اندوز ہو پائیں گے اور بجلی کا بل بھی مناسب آ سکتا ہے۔واضح رہے کہ عموما رات 7 بجے سے 11 بجے تک کا ٹائم پیک آورز ہوتا ہے۔اپنے اے سی کو انورٹر اے سی بنائیں:انورٹر اے سی کی خاص بات یہ ہے کہ یہ بجلی بچانے میں کارآمد ہو سکتے ہیں۔ عام اے سی کے مقابلے میں انورٹر اے سی 40 فیصد سے 60 فیصد تک بجلی کی بچت کرتا ہے۔ اگرچہ انورٹر اے سی کی قیمت عام اے سی کے مقابلے میں زیادہ ہے مگر ہر ماہ ہزاروں کے بل سے بہتر ہے ایک بار ہی خرچہ کر لیا جائے۔سورج کی روشنی:

عموما سورج کی روشنی کمرے کو گرم رکھتی ہے، یہی روشنی اے سی کی کولنگ کو بھی ختم کر سکتی ہے۔ دن میں تپتی گرمی میں جب آپ اے سی کو آن کریں تو اس بات کا خیال رکھیں کہ کمرے میں سورج کی روشنی نہ آرہی ہو، اس سے ٹھنڈک کافی دیر تک کمرے میں رہ سکتی ہے۔

Leave a Comment